سب ثبوت ختم ، گواہ منحرف، ملوث افراد مفرور رائو انوار کو بری کرنےکی تیاریاں کی جا رہی ہیں مریم نوازاور شاہد خاقان عباسی جیل جا سکتے ہیں لیکن رائو انوار نہیں


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) ممتاز صحافی اور سماجی کارکن جبران ناصر کا کہنا ہے کہ نقیب اللہ قتل کیس کے شواہد کو مٹادیا گیا۔ سات پولیس اہلکار مفرور جبکہ پانچ اہلکار اپنے بیان سے منحرف ہو گئے ہیں۔نقیب اللہ محسود کی تیسری برسی پر کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے جبران ناصر کا کہنا تھا کہ ان کا کہنا تھا کہ اس کیس میں شواہد کو مٹا دیا گیا، راؤ انوار

کو بری کرنے کی تیاری کی جارہی ہے، راؤ انوار 444 مقابلوں سے بری کرنے کی سازش ہورہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ثناء اللہ عباسی کو انکوائری آفسر رکھا گیا تھا، اس آفسر کو ہٹا کر کے پی کے کا آئی جی لگایا ہے، ریاست کا مقابلہ راؤ انوار سے ہے، اگر نقیب کا مقدمہ ہارے تو ریاست ہارے گی۔ جبران ناصر کا کہنا تھا کہ مریم نواز، شاہد خاقان عباسی اور شہباز شریف جیل جا سکتے ہیں لیکن راؤ انوار جیل نہیں جاسکتا ہے، راؤ انوار کا پروٹوکول ریاست سے بڑا ہے تاہم وہ تمام پلیٹ فارم پر آواز بلند کریں گے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us