تنقید سے گھبرانے والا نہیں اورنہ ہی اہداف پر کوئی سمجھوتہ کروں گا،وزیراعظم


ڈیووس(نیوز ڈیسک )وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ پاکستان کو فلاحی ریاست بنانا میرا وژن ہے،بتدریج تبدیلی کی طرف بڑھ رہے ہیں،پاکستان کی بیمارمعشیت کو ٹھیک کرنے کے لیے سخت فیصلے کیے، تنقید سے گھبرانے والا نہیں اور نہ ہی اہداف پر کوئی سمجھوتہ کروں گا۔وزیراعظم عمران خان نے ڈیووس میں پاکستان بریک فاسٹ تقریب سے خطاب

کرتے ہوئے ڈیووس میں دنیا کی اہم شخصیات سےملاقات کاموقع ملتا ہے،انسان کواپنی ناکامیوں سے سیکھنا چاہیئے،پہلے ٹیسٹ میں میچ کے بعد مجھے ڈراپ کردیا گیا،محنت کرکے دوبارہ ٹیم کا حصہ بنا،مسلسل جدوجہد سےہی انسان اعلیٰ مقام حاصل کرتا ہے،پرسکون زندگی انسان کے لیے زہرقاتل ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ قوموں کی زندگی میں مشکل حالات بھی آتے ہیں،اکثرلوگ مشکل حالات میں ہمت ہارجاتے ہیں،ڈیووس آنےوالےسربراہان میں سب سےسستادورہ میراہے،عوام کا پیسہ مہنگے دوروں پرخرچ کرنا نہیں چاہتا،وقت کے ساتھ مشکل حالات کامقابلہ کرنا سیکھا۔عمران خان کا کہنا تھا کہ نچلےطبقےکواوپرلانے کے لیے نمل یونیورسٹی بنائی،میری والدہ کاانتقال کینسر کی وجہ سے ہوا،پاکستان میں غریب کےلیےکینسرکا علاج کرانا ممکن نہ تھا،عوام کے کےلیےکینسراسپتال کی بنیاد رکھی،اسپتال بنانے سے زیادہ اسے چلانا مشکل تھا۔وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ پاکستان میں بےپناہ ٹیلنٹ ہے،ہم نے اپنے ٹیلنٹ کو صحیح استعمال نہیں کیا،بڑےخواب کوحقیقت بنانے کےلیےپلان بی ہونا چاہیئے،کامیابی کےلیےپیچھے مڑنے کا کوئی راستہ نہیں ہوتا،60کی دہائی میں پاکستان تیزی سے تقری

کرنےوالاملک تھا،پاکستان بنانے کے پیچھے ایک مقصدتھا،وقت کے ساتھ ہم قیام پاکستان کا مقصد بھول گئے،نظریئےکےبغیرمعاشرے مرجاتے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان قدرتی وسائل سے مالامال ہے،پاکستان کے پاس سونے،تانبےاورکوئلےکے بڑےذخائرہیں،گڈ گورننس کے ذریعے ہی پاکستان ترقی کرسکتا ہے،عوام کی خوشحالی کے بغیر ملک ترقی نہیں کرسکتا،عوام کی فلاح کے لیے احساس پروگرام کا آغاز کیا،پاکستان دنیا کے حسین ترین ممالک میں سے ایک ہے،پاکستان میں سیاحت کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔عمران خان کا مزید کہا تھا کہ کرپٹ”اسٹیٹس کو“پاکستان کے لیے بڑا مسئلہ ہے،پاکستان میں ”اسٹیٹس کو“ نے اداروں کو تباہ کیا،جزا ءاورسزا کے بغیر کوئی ادارہ کامیاب نہیں ہوتا،بھارت 7گنا بڑا ہے لیکن اسے ہم نے کئی مرتبہ شکست دی۔وزیراعظم نے مہاتیرمحمد کو اسلامی دنیاکا عظیم لیڈر قرار دیتے ہوئے کہا کہ مہاتیرمحمد نے کہاانہیں کرپٹ “اسٹیٹس کو” کا سامنا تھا، مہاتیرمحمد نے کہا گھبرانا نہیں،صبر سے کام لیں،مہاتیرمحمدامت مسلمہ کے لیے مثا ل ہیں،مہاتیرمحمدنےکرپشن کاخاتمہ کرکے ترقی کی۔عمران خان کہا کہ بتدریج معیشت ترقی کی جانب گامزن ہے،حکومت سرمایہ کاروں کو سہولیات دے رہی ہے،توانائی کے شعبے میں بڑےگردشی قرضے کا سامنا ہے،سابقہ حکومتوں کےلیے گئےقرضوں کاانباربڑاچیلنج تھا،پہلے آمدن کا بڑا حصہ سود کی مد میں خرچ ہوتا تھا، اب حکومت کے پہلے سال کرنٹ خسارے میں 75فیصد کمی آئی۔وزیراعظم عمران خان نےاپنے خطاب میں مزید کہاکہ فرسودہ نظام میں اصلاحات لانا آسان نہیں ہوتا ،بہترنظام حکومت ترقی کے لیے ناگزیر ہے،پاکستان کی بیمارمعشیت کو ٹھیک کرنے کے لیے سخت فیصلے کیے، ٹیومر نکالنے کےلیے آپریشن سے گزرنا پڑتا ہے،تنقید سے گھبرانے والا نہیں،اپنے اہداف پر کوئی سمجھوتا نہیں کروں گا۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us