ملک میں جاری آٹے کا بحران مصنوعی نکلا


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) ملک میں کسی قسم کا کوئی بحران نہیں ہے۔تجزیہ نگار صابر شاکر کا کہنا ہے کہ ملک میں کسی چیز کی کوئی قلت نہیں ہے۔یہ مصنوعی قلت ہے جو عوام کی دکھائی جا رہی ہے۔اپنی یوٹیوب ویڈیو میں بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھاصوبائی حکومتوں نے ضرورت سے زیادہ آٹا خریدا ہے جو کہ ان کے پاس موجود ہے، یہ ایک مافیا

ہے جو چاہتا ہے کہ عمرا ن خان حکومت چھوڑ کر چلے جائیں، اسی لئے یہ آٹے کی کمی دکھائی جا رہی ہے۔صابر شاکر کا کہنا تھا کہ یہ وہی ہو رہا ہے جو 2008 میں کیا گیا تھا جب ق لیگ کو ہٹانا او ر پیپلز پارٹی کو الیکشن جتوانا تھا۔تب بھی پوری مارکیٹ میں آٹے کی کمی کر دی گئی تھی جس کے بعد گالیاں ق لیگ کو پڑیں کہ وہ سارا آٹا کھا گئے ہیں۔انکشاف کرتے ہوئے تجزیہ نگار کا کہنا تھا کہ اس آٹے کی قلت میں سب سے زیادہ ہاتھ دو وزراء کا ہی ہے، ایک صوبائی اور ایک وفاقی۔وہ چاہتے ہیں کہ عمران خان کو اقتدار سے ہٹا دیں، یہی وجہ ہے کہ آٹے کی قلت دکھائی جا رہی ہے۔واضح رہے کہ گزشتہ ایک ماہ میں آٹے کی قیمت میں ریکارڈ اضافہ دیکھنے میں آیا تھا جس کے بعد قیمت 40 روپے سے70 روپے تک چلی گئی تھی۔یوٹیوب ویڈیو میں صابر شاکر کا کہنا تھا کہ عمران خان وفاقی وزیر فواد چوہدری کے عثمان بزدار کے خلاف بیان بازی پر ناراض ہیں جس کے بعد انہیں آئندہ اس طرح کی بیان

بازی سے گریز کرنے کا کہا گیا ہے۔دوسری طرف عمران خان اس آٹے کے بحرا ن سے بچنے کے لئے کوششوں میں لگے ہوئے ہیں جس کے لئے انہوں نے بنی گالا میں ایک میٹنگ بھی بلائی تھی جس میں پارٹی کے صرف وہ لوگ موجود تھے جس کو قابل اعتماد ہیں۔یادرہے کہ تجزیہ نگار کا کہنا تھا کہ ملک میں آٹے کا کوئی بحران نہیں ہے، یہ سب مصنوعی بحران ہے جو عوام کو دکھایا جا رہا ہے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us