پاکستانیوں نے میدان ِ عرفات کی مقدس پہاڑیوں پر بھی وال چاکنگ کرڈالی۔۔پہاڑیوں پر کیا کچھ لکھ دیا،قوم کا سرشرم سے جھُک گیا


مکّہ مکرمہ (مانیٹرنگ ڈیسک ) پاکستان میں وال چاکنگ کا بہت زیادہ رواج ہے۔ سڑکوں اور گھروں کی کوئی ہی ایسی دیوار ہو گی، جہاں پر لوگ اپنے نام ، سیاسی نعرے یا نامناسب کلمات نہ تحریر کرتے ہوں۔ یہاں تک کہ عوامی بیت الخلاء اور قدیم ثقافتی اور تاریخی ورثے سے جُڑی عمارات کو بھی معافی نہیں دی جاتی۔ یہ ایک بہت ہی منفی رویہ ہے جس سے پاکستانیوں کی بہت بدنامی ہوتی ہے۔
مگر پھر بھی اس معاملے میں بحیثیت قوم ہم سُدھرنے کو تیار نہیں ہیں۔ تاہم وال چاکنگ کا معاملہ اب صرف پاکستان تک ہی محدود نہیں رہا، پاکستانی لوگ اپنا یہ نامناسب شوق دیارِ غیر میں بھی لے گئے ہیں۔ اکثر خلیجی ممالک کی پہاڑی چٹانیں اور تفریحی مقامات پاکستانیوں کے اس خود ساختہ فن کی چغلی کھا رہی ہوتی ہیں۔

Advertisement

تاہم پاکستانیوں کے وال چاکنگ کے اس شوق نے سعودی عرب کے مقدس اور تاریخی مقامات کو بھی معاف نہیں کیا۔

حالیہ دِنوں عرفات کی پہاڑی کی ایسی تصویریں سامنے آئی ہیں جہاں عمرہ اور حج کی غرض سے آئے پاکستانی منچلوں نے مختلف چٹانوں پر اپنے نام لِکھ ڈالے ہیں۔ ایسا اُنہوں نے کیوں کیا، اس کی کوئی توجیہ نہیں پیش کی جا سکتی۔ کیونکہ عرفات اور دیگر پہاڑیاں مُسلم اُمّہ کا قدیم تاریخی و ثقافتی ورثہ ہے، جس کو ذرا برابر بھی نقصان پہنچانا یا اس کی صورت بگاڑنا کسی صورت بھی گوارا نہیں کیا جا سکتا۔ اور بطور مسلمان ایسا کرنا بہت ہی شرمناک بات ہے۔ مگر چند پاکستانیوں کی جانب سے ایسی حرکات کا سلسلہ لگاتار جاری ہے۔ پاکستانیوں کی وال چاکنگ سے صرف عرفات کی پہاڑی کا ہی حُسن متاثر نہیں ہوا، جبکہ عرفات مائدہ میں جبل رحمت نامی مقدس پہاڑی بھی ان کی اس بے ہودہ حرکات سے محفوظ نہیں رہ سکی۔ ان تصویروں کے سامنے آنے پر لوگوں کی جانب سے سخت غم و غصے کا اظہار کیا گیاہے، اور مطالبہ کیا گیا ہے کہ اگر مقدس مقامات پر کسی قِسم کی وال چاکنگ کرتا پایا جائے تو اسے سخت سزا دی جائے اور بھاری جرمانہ بھی عائد کیا جائے۔
تاکہ دیگر افراد کو حوصلہ شکنی ہو اور کوئی مستقبل میں اس طرح کا کام کرنے کا حوصلہ نہ کرے۔ واضح رہے کہ متحدہ عرب امارت میں بھی کئی تفریحی مقامات اور پہاڑی چٹانوں پر پاکستانیوں کی وال چاکنگ کے سینکڑوں نہیں ہزاروں نمونے دیکھنے کو مِلتے ہیں۔ اسی وجہ سے امارات میں قانون وضع کیا گیا ہے کہ پہاڑی چٹانوں پر کچھ بھی لکھنے یا تصویریں بنانے والے افراد سے سختی سے نمٹا جائے گا۔ ایسے غیر ذمہ افراد پر بھاری جرمانہ بھی عائد کیا جا رہا ہے۔ تاہم اس کے باوجود درجنوں پاکستانی اس طرح کی حرکتیں دُہرانے سے باز نہیں آتے۔

 



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us