تمہارے جیسے تھرڈ کلاس بندے سے میں لائن پر بات نہیں کرنا چاہتی، فردوس اعوان لیگی رہنما پربرس پڑیں


اسلام آباد(نیوز ڈیسک)گزشتہ روز نجی ٹی چینل کے ایک پروگرام میں پاکستان تحریک انصاف اور مسلم لیگ (ن ) کے رہنماؤں کے درمیان گفتگو بداخلاقی کی ساری حدیں پار کر گئیں۔ دونوں جانب سے ایک دوسرے کی ذات بڑھ چڑھ کر حملے کیے گئے۔ جبکہ وزیر اعظم کی معاونِ خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے مسلم لیگ رہنما اور معروف وکیل عطا تارڑ کے مرحوم والد سابق صدرِ پاکستان رفیق تارڑ پر بھی الزامات کی

بوچھاڑ کر دی۔یہ تکرار اس حد تک بڑھ گئی کہ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بیچ گفتگو میں ہی اپنا ٹیلی فون بند کر کے رابطہ منقطع کر دیا۔پروگرام کے دوران عطا احمد تارڑ نے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان سے کہا کہ میں آ پ سے کیا بات کروں آپ تو پہلے زرداری صاحب کی قسمیں دیتی تھیں۔میرا جو دل کرے گا میں وہ بات کروں گا۔ میں پاکستان کا ایک آزاد شہری ہوں۔ میں آپ سے ڈرنے والا نہیں ہوں۔آپ ہر دفعہ وزیر بنیں۔ میرا جو دل کرے گا وہ کہوں گا۔ آپ قانون کی بات نہ کریں آپ پر تو بسیں چوری کرنے کا کیس ہے۔ کوئی ادارہ آپ پر ہاتھ نہیں ڈالتا۔ آپ کو شرم نہیں آتی، یہاں بیٹھ کر بات کرتے ہوئے۔ پہلے اُن بسوں کا حساب دیں۔ جو آپ نے اپنے ڈیرے پر کھڑی کر رکھی ہیں۔اسی دوران ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان بھی ساتھ ساتھ بولتی رہیں۔ انہوں نے عطا تارڑ سے کہا کہ آپ لوگ پہلے اپنے کرتوتوں پر روشنی ڈالیں، میری ذات کے بارے میں بعد میں بات کریں۔آپ لوگوں نے نیب کو یرغمال بنایا ہوا تھا۔ آج آپ لوگوں کو قانون کو جواب دینا ہے۔تمہیں شرم آنی چاہیے۔ تمہیں بکواس بند کرنی چاہیے۔ تم

رفیق تارڑ کے بیٹے ہو اور تمہاری کیا حیثیت ہے۔ تم اس رفیق تارڑ کی اولاد ہو جو بریف کیس بھر کر کوئٹہ میں جج خریدنے گیا تھا۔ ایوانِ صدر میں رفیق تارڑ کیا کرتے رہے ہیں۔ تم لوگوں کا کیا میرٹ تھا۔ آج بھی تم لوگ خرید و فروخت میں لگے ہوئے ہو۔تم لوگوں کا زور واجد ضیاء پر نہیں لگ رہا، اس لیے تمہیں اس سے تکلیف ہو رہی ہے۔ واجد ضیاء اپنا قانونی کام کرے گا۔ تم مقدس گائے نہیں ہو۔ تم بکواس بند کرو تمہارے جیسے تھرڈ کلاس بندے سے میں لائن پر آنا ہی نہیں چاہتی۔ اس کے بعد وزیر اعظم کی معاونِ خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے اپنا فون بند کر دیا۔ اس پر عطا تارڑ نے کہا کہ آپ یہ الزامات ثابت کردیں میں اپنی پارٹی رُکنیت سے استعفیٰ دے دُوں گا۔ آپ جو زبان استعمال کر رہی ہیں، کیا ایک وزارت پر فائز ہو کر اس طرح کی گفتگو کرنا انہیں زیب دیتا ہے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us