جج ارشد ملک ویڈیو سے متعلق ساراریکارڈ میرے پاس لندن میں موجود ہے، ناصر بٹ


اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) ن لیگ کے رہنما ناصر بٹ کا کہنا ہے کہ جج ارشد ملک ویڈیو سے متعلق سب کچھ میرے پاس لندن میں ہے،پاکستان ایسی کوئی چیز نہیں ہے جس کے لیے چھاپے مارے جا رہے ہیں۔ایسا لگتا ہے کہ وہ چھاپے مار کر عمران خان کو تسلی دے رہے ہیں۔انہوں ابھی تک میرے بھتیجے کو جیل میں رکھا ہوا ہے۔ایف آئی اے کی کوشش ہے کہ اس

پر 480 لگایا جائے۔آج تک ویڈیو کیس سے متعلق ایف آئی اے نے مجھ سے کچھ نہیں پوچھا۔ویڈیو کا شریف خاندان میں کسی کو پتہ نہیں تھا ،میں نواز شریف کے ساتھ عدالت میں پیش ہونے جاتا تو دیکھتا تھا کہ وہ کتنی تکلیف میں ہیں۔ارشد ملک نے مجھے یہ بھی بتایا کہ اس نے دباؤ میں آ کر فیصلہ دیا۔کیس بنانے والے نواز شریف کے خلاف کوئی ثبوت پیش نہیں کر سکے۔ناصر بٹ نے مزید کہا کہ جج ارشد ملک سے ملاقات کے لیے اپنے اکاؤنٹنٹ کو لے کر پہنچا، میں نے اپنے اکاؤنٹنٹ سے کہا کہ ارشد ملک جو کچھ کہیں اسکو ریکارڈ کر لو، جج ارشد ملک نے مجھے کچھ لکھ کر دیا اور کہا کہ اس سے ثابت ہو جائیگا کہ نواز شریف بے قصور ہیں، انھوں نے مجھے ایسی باتیں بتائیں کہ سن کر حیران ہو گیا۔انھوں نے کہا کہ میں نے مریم نواز کر فون کیا اور کہا کہ نواز شریف کے مقدمے کے خلاف ثبوت لارہا ہوں۔ انھوں نے بتایا کہ ویڈیو سے متعلق جج ارشد ملک کو پتا نہیں تھا، مجھے یہ نہیں پتا تھا کہ ویڈیو کا

اتنا بڑا سکینڈل بن جائیگا۔ انکا کہنا ہے کہ جج ارشد ملک بار بار نواز شریف سے ملاقات کا اصرار کرتے رہے، ان کے بے حد اصرار پر نواز شریف سے بات کی۔انکا کہنا ہے کہ جج ارشد ملک کہتے ہیں کہ سزا کا فیصلہ دباؤ میں آ کرکیا، سزا کو 10 سال سے کاٹ کر 7 سال کر دیا تھا۔ انھوں نے کہا کہ جج ارشد ملک کہتے ہیں کہ انھیں بھی سزا کا دکھ ہے، انکو ڈراؤنے خواب آتے ہیں۔ ناصر بٹ کا کہنا ہے کہ میری جج ارشد ملک سے ہیلو ہائے رہتی ہے،اگر انکو بلیک میل کرتا تو ان سے ملاقات کیسی ہوتی، ،انکا مزید کہنا ہے جج ارشد ملک کے کسی آڈیو پیغام کا مجھے نہیں پتا، مجھ سے ایف آئی اے نے کسی قسم کا سوال نہیں کیا، میرے اکاؤنٹنٹ کو بھی گرفتار کر لیا گیا ہے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us