پیپلزپارٹی میں بغاوت پھوٹ پڑی،بلاول بھٹو کی بات ماننے سے انکار


کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)سینئرصحافی رانا عظیم کا کہنا ہے کہ بلاول بھٹو نے کچھ عرصہ قبل اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ میں وزارتوں میں تبدیلی کر رہا ہوں۔کیونکہ میں کئی وزارتوں کی کارگردگی سے مطمئن نہیں ہوں۔لیکن اب پاکستان پیپلز پارٹی گروپ بندی کا شکار ہو گیا ہے اور پارٹی کے اندر 3 گروپس بن چکے ہیں۔ایک گروپ فریال تالپور سے

ہدایات لیتا ہے جب کہ دوسرا گروپ وزیراعلیٰ سندھ سے ہدایات لیتا ہے۔جب کہ تیسرا گروپ بلاول بھٹو کے ارد گرد گھومتا ہے۔اس گروپ کا شمار آصف زرداری کے قریبی حلقوں میں ہوتا ہے لیکن باقی گروپس اتنے طاقتور ہیں کہ بلاول بھٹو کوئی تبدیلی کر ہی نہیں پا رہے۔ان گروپس نے بلاول بھٹو کو دھمکی دی ہے کہ کسی بھی وزارت میں تبدیلی کی گئی تو وہ فارورڈ بلاک بنا لیں گے۔بلاول بھٹو کو سندھ میں دشواری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے،وہاں اپوزیشن میں تحریک انصاف اور جی ڈے اے ہے۔تو دوسرے گروپس نے بلاول بھٹو کو دھممکی دی ہے کہ اگر کوئی تبدیلی کی گئی تو وہ دوسری جماعت میں شمولیت اختیار کریں

گے۔یہ جماعت تحریک انصاف سمیت کوئی بھی ہو سکتی ہے۔جب کہ دوسری جانب سینئر تجزیہ کار مبشر لقمان نے دعویٰ کیا ہے کہ ذوالفقار علی بھٹو کی بہن فاطمہ سیاست میں آسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ اگر فاطمہ بھٹو سیاست میں آگئیں تو ان کا لہجہ اور بولنے کاانداز ایسا ہے کہ پاکستان کی سیاست میں بے نظیر کی طرح کردار ادا کر سکتی ہیں۔فاطمہ بھٹو کے سیاست میں آنے سے سب سے زیادہ نقصان بلاول بھٹو کو ہوگا۔ مبشر لقمان نے کہا کہ بلاول بھٹو سیاست میں نہیں رہنا چاہتے، بلکہ نااہل ہونا چاہتے ہیں۔ جس سے پیپلزپارٹی کو زندہ لاش مل جائے گی اور آصفہ بھٹو سیاست میں آجائیں گی۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


Copyright © 2017 https://pakistanlivenews.com All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Disclaimer | Contact Us