منگل‬‮   23   اکتوبر‬‮   2018
           

امریکہ کسی بھی وقت ایران پر فوجی حملہ کر دے گا ،،اگر ایران کو بچانا ہے تو حسن روحانی کی بجائے کس کی حکومت لائی جائے؟؟؟چونکا دینے والا مشورہ دے دیا گیا


واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) ایران کی قومی سلامتی کی ذمہ داریوں کے لئے متعین شخصیات نے امریکی جارحانہ پالیسی کے سامنے موجود ہ ایرانی حکومت کو بے بس اور کمزور قرار دے دیاہے۔ حکومت کو امریکا میں طاقت ور ایرانی لابی کے سربراہ ہوشنگ امیر احمدی نے تجویز دی ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی دھمکیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے ایران میں

پاسداران انقلاب کے ذریعے ایک عسکری حکومت تشکیل دی جائے۔میڈیارپورٹس کے مطابق امریکا کی روٹجرز یونی ورسٹی کے پروفیسر امیر احمدی نے کہاکہ ایرانی صدر حسن روحانی کی حکومت امریکی دھمکیوں کے مقابل محاذ آرائی نہیں کر سکتی اور یورپی ممالک بھی روحانی کی حکومت کو سنجیدگی سے نہیں لیتے اور اسے ایک کمزور حکومت سمجھتے ہیں۔ امیر احمدی نے کہا کہ جان بولٹن کا امریکی قومی سلامتی کونسل کا مشیر اور ڈائریکٹر مقرر کیا جانا یہ امر ایران پر فوجی حملے کے امکان کو بڑھا رہا ہے۔ روحانی کی حکومت سیاسی اور سفارتی میدان میں ٹرمپ انتظامیہ کا مقابلہ نہیں کر سکتی لہذا اسے دور کر دینا چاہیے۔امیر احمدی کا مزید کہنا تھا کہ بولٹن امریکی صدر سے یہ چاہتے ہیں کہ جوہری معاہدے سے نکل کر ایرانیوں پر شدید پابندیاں عائد کی جائیں اور ایران کے بحری اور فضائی راستوں کا محاصرہ کر لیا جائے۔ اس کے بعد پھر ایرانی میزائل پروگرام کو روکا جائے اور اسی طرح خطے بالخصوص لبنان، شام، عراق اور یمن میں ایرانی پاسداران انقلاب کی مداخلتوں کا سلسلہ ختم کیا جائے۔امیر احمدی کے نزدیک بولٹن اور امریکا کے نئے وزیر خارجہ مائیک پومپیو آخرکار ایرانی نظام کا سقوط چاہتے ہیں اور اس مقصد کے لیے وہ کچھ بھی کر گزریں گے، اس میں ایرانی اپوزیشن کے لیے ہر طرح کی سپورٹ پیش کرنا شامل ہے۔

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ تر ین
دلچسپ و عجیب
روحانی دنیا
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ پاکستان لائیو نیوز محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Pakistan Live News. All Rights Reserved
   About Us    |    Privacy policy    |    Contact Us