اتوار‬‮   23   ستمبر‬‮   2018
           

20ارکان اسمبلی کی رکنیت معطل۔۔۔صدر نے احکامات جاری کر دیے


نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک )بھارت کے صدر نے نئی دہلی کی ریاستی اسمبلی کے 20 اراکین کو قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے سرکاری ملازمت رکھنے کے انکشاف پر الیکشن کمیشن کی سفارش پر معطل کردیا۔بھارتی میڈیا کے مطابق عام آدمی پارٹی کی اکثریت رکھنے والی اسمبلی میں صدر کی جانب سے اس صفائی کے بعد ایک تہائی اراکین ایوان سے باہر

ہوچکے ہیں تاہم عام آدمی پارٹی کی اکثریت اب بھی قائم ہے لیکن انھوں نے اس فیصلے کو ‘غیرآئینی’ قرار دیا ہے۔بھارتی الیکشن کمیشن نے دو روز قبل ہی منتخب کرہ فرائض کے باوجود سرکاری ملازمت رکھنے پر اراکین اسمبلی کو نااہل کرنے کی سفارش کی تھی۔خیال رہے کہ بھارت کی اکثر ریاستوں میں سیاست دانوں کو رکن اسمبلی ہوتے ہوئے ملازمت کرنے کی قانونی طور پر اجازت نہیں ہے تاہم وزیر کے طور پر تعینات اراکین ان قوانین سے مستثنی ہیں۔بھارت کی چند ریاستوں میں رکن اسمبلی ہوتے ہوئے سرکاری عہدہ رکھنا قانونی طور پر جائز ہے لیکن دارالحکومت نئی دہلی میں ایسا قانون موجود نہیں ہے۔بھارتی حکمراں جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی) کے وزیراعظم نریندر مودی کی جانب سے گزشتہ سال نامزد کردہ صدر رام ناتھ کویند نے الیکشن کمیشن کے فیصلے کی توثیق کرتے ہوئے اراکین اسمبلی کو معطل کردیا۔یاد ہے کہ عام آدمی پارٹی نے 2015 کے انتخابات میں دہلی اسبملی کی 70 نشستوں میں سے 67 میں کامیابی حاصل کی تھی جبکہ تین اراکین بی جے پی سے منتخب ہوئے تھے تاہم صدر کی جانب سے اس فیصلے کو عام آدمی پارٹی نے سیاسی فیصلہ قرار دیا۔اسمبلی کی رکنیت سے ہاتھ دھونے والے عام آدمی پارٹی کے رہنما اشوتوش کی جانب سے ٹویٹر پر اپنے پیغام میں کہا گیا کہ صدر کے احکامات ‘غیر آئینی اور جمہوریت کے لیے خطرناک’ ہیں۔

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ تر ین
دلچسپ و عجیب
روحانی دنیا
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ پاکستان لائیو نیوز محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Pakistan Live News. All Rights Reserved
   About Us    |    Privacy policy    |    Contact Us