جمعرات‬‮   15   ‬‮نومبر‬‮   2018
           

ہتھیارڈالنے والے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کا اعترافی بیان


راولپنڈی(نیوزایجنسی) کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے حال ہی میں ہتھیارڈالنے والے سابق ترجمان احسان اللہ احسان نے اپنے اعترافی بیان میں طالبان کے بھارتی خفیہ ادارے ”را”اورافغان خفیہ ادارے ”این ڈی ایس ”کے ساتھ رابطوں کے اعتراف کرتے ہوئے کہاہے کہ ٹی ٹی پی نے ہر کارروائی کی ”را” اور”این ڈی ایس” سے قیمت وصول کی،شمالی وزیرستان میں آپریشن شروع ہونے پرطالبان افغانستان فرار ہوئے ،این ڈی ایس نے

انہیںباقاعدہ تذکرے یعنی شناختی کارڈ دیے ہوئے ہیں، شناختی کارڈز پریہ افغانستان میں ایک سے دوسری جگہ آسانی سے جاسکتے ہیں جبکہ پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ احسان اللہ احسان نے غیر ملکی دشمنوں کے ایجنڈے اور پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی سازشوں کو بے نقاب کیا ہے ۔بدھ کوآئی ایس پی آرکی طرف سے پاک فوج کی تحویل میں موجود کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان کے سابق ترجمان احسان اللہ احسان کااعترافی بیان جاری کیاگیاہے جس میں اس نے سنسنی خیز انکشافات کئے ہیں ۔احسان اللہ احسان نے کہاکہ ان کے اوران کے ساتھیوں کے بھارت اور اس کے خفیہ ادار ے ”را”سے رابطے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی مدد ملنا شروع ہوئی تو میں نے اعتراض کیا اور کہا کہ ہم تو کفار کی مدد کر رہے ہیں جس پر مجھے کہا گیا کہ اسرائیل سے مدد ملے گی تو وہ بھی لیں گے، افغانستان میں ٹی ٹی پی کے این ڈی ایس اور را سے تعلقات بنے ، افغانستان میں کمیٹیاں بنی ہوئی ہیں جن کے بھارت سے رابطے ہیں۔ احسان اللہ نے بتایا کہ ایسے شخص کوامیربنایا گیا جس نے اپنے استاد کی بیٹی سے زبردستی شادی کی، جنگجووں کو فوج کے سامنے لڑنے کیلئے چھوڑ دیا اور خود کمین گاہوں میں چلے گئے، ٹی ٹی پی نے ہرکارروائی کی را اوراین ڈی ایس سے قیمت وصول کی اپنے ملک میں دشمن کے پیسوں سے کارروائیاں کررہے ہیں، یہ ان کی خدمت ہے۔ احسان اللہ احسان نے کہاکہ کہ وہ سمجھ گیا ہے کہ خاص ایجنڈے اور ذاتی مقاصد کے تحت یہ سب ہورہاہے، این ڈی ایس نے انہیں باقاعدہ تذکرے یعنی شناختی کارڈ دیے ہوئے ہیں، شناختی کارڈز پریہ افغانستان میں ایک سے دوسری جگہ آسانی سے جاسکتے ہیں۔ احسان اللہ احسان نے واہگہ بارڈر،ملالہ یوسفزئی پرحملہ، کرنل شجاع خانزادہ پرحملہ سمیت دہشت گردی کے 10 بڑے واقعات کی ذمہ داری قبول کی، انہوں نے گلگت بلتستان میں 9 غیرملکی سیاحوں کے قتل کی ذمہ داری بھی قبول کی۔ انہوں نے بتایا کہ پاک فوج کے حالیہ آپریشن سے افغانستان میں جماعت الاحرارکے کیمپ تباہ ہوئے، کچھ کمانڈرزبھی مارے گئے اور انہیں علاقہ چھوڑنا پڑا۔ اعترافی بیان میں احسان اللہ احسان نے بتایا کہ 2008

میں کالج کا طالب علم تھا تو کالعدم ٹی ٹی پی میں شمولیت اختیار کی ، ان نوبرسوں میں تحریک طالبان میں میں بہت سی چیزوں کو دیکھا ،ٹی ٹی پی نے اسلام کے نام پر خصوصاً نوجوان طبقے کو گمراہ کرکے اپنے ساتھ ملایا جو نعرے یہ لوگ لگاتے تھے ان پر خود پورا نہیں اترتے تھے، امرا بنا بیٹھا مخصوص ٹولہ لوگوں سے بھتے لیتا ہے، یہ لوگوں کاقتل عام کرتے ہیں،پبلک مقامات پردھماکے کرتے ہیں، اسکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں پر حملے کرتے ہیں۔ احسان اللہ احسان نے کہا کہ اسلام کسی صورت بے گناہ کو مارنے کی اجازت نہیں دیتا ہیں مگر یہ اپنے مکروہ عزائم کی تکمیل کے لئے کسی معصوم کی جان لینے سے باز نہیں آتے تھے ۔ احسان اللہ احسان نے بتایا کہ حقائق جاننے کے بعد مجھے طالبان کی حقیقت معلوم ہوئی اور اس تنظیم میں شمولیت پر اپنی غلطی کا احساس بھی ہوا ۔احسان اللہ احسان نے کہاکہقبائلی علاقوں میں آپریشن شروع ہوئے تو طالبان قیادت کی دوڑ تیز ہوگئی، ہربندہ چاہتا تھا کہ وہ تنظیم کا امیر بنے ، شمالی وزیرستان میں آپریشن شروع ہونے پر ہم افغانستان چلے گئے جہاں ساتھیوں کے بھارت اور راسے تعلقات تھے، ان کو معلومات فراہم کیں اور اہداف دیئے۔ احسان اللہ احسان کے مطابق حکیم اللہ کی ہلاکت کے بعد نئے امیرکیلئے انتخابی مہم چلائی گئی، امیر کی دوڑمیں عمرخالد خراسانی، ملا فضل اللہ اور خان سید سجنا شامل تھے، ہر کوئی اقتدار حاصل کرنا چاہتا تھا ، شوریٰ نے فیصلہ کیا کہ قرعہ اندازی کرائی جائے جس کے ذریعے ملافضل اللہ کو امیر بنادیا گیا۔ احسان اللہ احسان کے مطابق حملوں سے کمانڈروں اورنچلے طبقے میں مایوسی پھیلی ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ وہاں سے نکلنے کیخواہش رکھنے والوں کیلئے پیغام ہے کہ واپس آجائیں، امن کا راستہ اختیار کریں اور پرامن زندگی گزاریں۔ دوسری جانب ڈی جی آئی ایس پی آر میجرجنرل آصف غفورنے مائیکرو بلاگنگ ویب

سائٹ ٹوئٹر پراپنے پیغام میں کہاکہ احسان اللہ احسان نے غیر ملکی دشمنوں کے ایجنڈے اور پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کی سازشوں کو بے نقاب کردیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ نوجوان ہماری طاقت ہیں اور وہ دشمن کی جھوٹی باتوں کے جھانسے میں نہیں آئیں گے ۔

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تازہ تر ین
دلچسپ و عجیب
روحانی دنیا
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ پاکستان لائیو نیوز محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Pakistan Live News. All Rights Reserved
   About Us    |    Privacy policy    |    Contact Us