ہفتہ‬‮   19   جنوری‬‮   2019
           

نوازشریف کو اب تکلیف کے بعد ریلیف کہاں سے ملنے والا ہے حکومت نے کون سی سنگین غلطی کر ڈالی سیاسی تجزیہ کاروں نے حیران کن انکشافات کر ڈالے


اسلام آباد(آئی این پی)پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما ناصر حسین شاہ نے کہا کہ جے آئی ٹی کو جس طرح میڈیا پر لیک کیا گیا وہ سب کے سامنے ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ سب کو نظر آرہا ہے کہ اس وقت یک طرفہ احتساب ہو رہا ہے۔اتوار کو نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کی اپنی نیب زدہ لوگ بیٹھے ہوئے ہیں۔ اس حکومت نے ریکارڈ قرضے لیے ہیں

آج تک کسی حکومت نے اتنے قرضے نہیں لیے۔ ہمارے لیے میڈیا ٹرائل یا یہ الزامات کوئی نئی نات نہیں۔مولانا فضل الرحمان کے ساتھ زرداری کی ملاقات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کسی گرینڈ الائنس کی کوئی بات نہیں ہورہی اور نہ ہی کوئی گرینڈ الائنس بننے جارہا ہے۔ زرداری سے مولانا کی ملاقات معمول کی ملاقات تھی۔تجزیہ نگار عارف نظامی نے کہا کہ حکومت کی حکمت عملی غلط تھی۔ جے آئی ٹی کی ضرورت نہیں تھی اور جے آئی ٹی کی وجہ سے اس کیس کو سیاسی رنگ ملا۔انہوں نے کہا کہ میاں نواز شریف نے زرداری سے ملاقات کرنے کی جانب توجہ نہیں دی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حالات میں دونوں جماعتیں نزدیک ضرور آچکی ہیں کیونکہ اس وقت ان کے لیے الگ الگ سیاست کرنا ممکن نہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ڈیل ہونے باتوں کو رد نہیں کیا جاسکتا کیونکہ نواز شریف کے خلاف جس طرح کے فیصلے آرہے ہیں اس کے بعد انہیں وہیں سے ریلیف ملے گا جہاں سے انہیں مشکلات میں ڈالا گیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ جب نیب اور حکومت کا موقف ایک ہوگا تو پھر کیا ہوگا۔ماہر قانون شاہ خاور نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت کچھ نہیں کررہی، زرادری کا کیس آج کا نہیں 2015 کا ہے۔ پاکستان پیپلز پارٹی خود بھی حکومت میں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی سامنے آنے کے بعد شہزاد اکبر اور ان کے ساتھی نے اس پر پریس کانفرنس کی اور لوگوں کو سزا بھی دے دی جس پر سپریم کورٹ نے بہت سخت ایکشن لیا۔انہوں نے کہا کہ موجودہ مقدمات میں موجودہ حکومت کا کوئی قصور نہیں ہے لیکن حکومت کی غلطیوں کی وجہ سے عوام میں یہ تاثر بن رہا ہے کہ سب کچھ موجودہ حکومت کررہی ہے۔ پی ٹی آئی کے رہنما صداقت علی عباسی نے کہا ہے کہ ہمارے سیاسی بیانیے کا فائدہ اٹھانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ہم احتساب کے خلاف سیاسی سطح پر کھڑے ہیں اور اداروں کے ساتھ تعاون کررہے ہیں۔ یہ حکومت اداروں کا احترام بھی کرے گی اور انہیں سپورٹ بھی کرے گی تاکہ ادارے کام کرسکیں۔مولانافضل الرحمان کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کی سیاست کی کوئی اہمیت نہیں۔ اس وقت پیپلز پارٹی اچھا کردار ادا کررہی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہم چاہتے ہیں کہ سب اپنا اپنا کام کریں۔

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ پاکستان لائیو نیوز محفوظ ہیں۔
Copyright © 2016 Pakistan Live News. All Rights Reserved
   About Us    |    Privacy policy    |    Contact Us